Search | تلاش
Archives
TaemeerNews Rate Card

Ads 468x60px

Our Sponsor: Socio Reforms Society India

تعمیر نیوز آرکائیو - TaemeerNews Archive

2015-12-22 - بوقت: 23:47

ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے 20 ٹن پتھر لایا گیا - انتظامیہ کی معنیٰ خیز خاموشی

Comments : 0
نئی دہلی
ایجنسیاں
ایودھیا میں متنازعہ مقام پر رام مندر کی تعمیر کے لئے بیس ٹن پتھر وہاں کے کارسیوک پورم میں لائے گئے ہیں ۔ یہ پتھر دو ٹرکوں میں ملک کی مغربی ریاست راجستھان سے لائے گئے ہیں۔ خیال رہے کہ الہ آباد ہائی کورٹ نے2010ء میں بابری مسجد، رام مندر کے قدیمی تنازعے پر فیصلہ سنایا تھا جس کے مطابق جس زمین پر بابری مسجد موجود تھی ، اسے ہندوؤں اور مسلمانوں کی درمیان تقسیم کرنے کا حکم دیا گیا تھا ۔ فی الحال یہ معاملہ سپریم کورٹ میں زیر سماعت ہے اور متنازع جگہ پر کسی قسم کی تعمیر کی اجازت نہیں ہے ۔ تاہم پی ٹی آئی کے مطابق ہندوؤں کے ایک رہنمامہنت نرتیہ گوپال داس نے کہا ہے کہ ایودھیا میں رام مندر بنانے کا وقت آگیا ہے ۔ ہندو تنظیم وی ایچ پی کے کارسیوک پورم کے انچارج شرد شرما نے صحافی اتل چندرا کو بتایا: مندر کی تعمیر کے کام میں بہت سارے پتھر کی ضرورت ہے ۔ ابھی20ٹن پتھر آئے ہیں، لیکن تقریبا دو لاکھ ٹن پتھر چاہئیں ۔ ہمیں امید ہے کہ آئندہ لوگوں کی جانب سے ہی پتھروں کا عطیہ آئے گا ۔ جیسے ہی حکومت کی طرف سے حکم ملے گا ، ہم تعمیری کام شروع کردیں گے ۔ رواں سال اشوک سنگھل کی موت سے پہلے ان کی صدارت میں14جون کو وشو ہندو پریشد کے رہنما بورڈ کی ایک میٹنگ ہوئی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ مندر کو پیسوں سے زیادہ پتھروں کا عطیہ چاہے ۔ وی ایچ پی کے ماہرین کے مطابق راجستھان میں کچھ کانیں بند ہورہی تھیں اسی لئے فوری طور پر پتھر منگوانے کا کام کیا گیا ہے ۔ اس سے پہلے بھی ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے پتھر آتے رہے ہیں ۔ 2007ء تک پتھر مسلسل لائے جارہے تھے لیکن راجستھان حکومت کی جانب سے کانوں کے قوانین تبدیلی کی وجہ سے پتھر لانے کا سلسلہ رک گیا تھا ۔ پتھر لائے جانے کے اس تازہ واقعہ پر انتظامیہ خاموش ہے ۔ انتظامیہ کا کہنا ہے کہ جب تک ایودھیا میں امن رہتا ہے تب تک وہ کوئی کارروائی نہیں کرے گی۔

VHP's first lot of stones for Ram temple arrive, police on alert

0 comments:

Post a Comment